adult learners,barriers to learning,define deep,define knowing,define successfully,definition of know,different learning styles,different styles,different types of learning,different types of learning styles,different ways of learning,graphic organizer definition,graphic organizer examples,graphic organizers for writing,how to understand math,knowing definition,known meaning,learning modalities,learning preferences,learning styles,learning techniques,learning types,styles of learning,tactile learning style,teaching skills,the gray,types of graphic organizers,types of learning styles,understand meaning,understanding,understanding math,visual learning style,web graphic organizer,what are learning styles,what is a graphic organizer,what is understanding,writing graphic organizers
سیکھنے کے تین انداز
معلومات حاصل کرنے، حاصل ہونے والی معلومات کو سمجھنے اور اس کی مدد سے مسئلے حل کرنے کے لیے ہم بنیادی طور پر تین طریقے استعمال کرتے ہیں:
1۔ سُننا
2۔ دیکھنا 
3۔ چُھونا

سب انسان سیکھنے کے لیے یہی طریقے استعمال کرتے ہیں لیکن ہر ایک کا انداز مختلف ہوتا ہے۔ کچھ لوگ سُن کر زیادہ سیکھتے ہیں، کچھ دیکھ کر اور کچھ چُھوکر۔

1۔ سُن کر سیکھنے والے
اگر آپ سن کر سیکھنے والے ہیں تو آپ سنی ہوئی باتوں کو دوسروں کے مقابلے میں زیادہ اچھی طرح سمجھ جاتے ہیں اور یاد رکھتے ہیں۔ دوسروں کی بات چیت یا آواز کے ذریعے جو معلومات ملتی ہیں وہ آپ کے ذہن میں محفوظ ہوجاتی ہیں اور ’لکھی‘ ہوئی ہدایات کے مقابلے میں آپ ہدایات کو ’ سُن‘ کر زیادہ بہتر سمجھ لیتے اور ذہن میں بٹھا لیتے ہیں۔ لکھی ہوئی چیزوں کو آپ اکثر بلند آواز سے پڑھتے ہیں کیونکہ آپ کے لیے ضروری ہے کہ انہیں سمجھنے کے لیے آپ انہیں آواز کی شکل میں سنیں۔
سن کر سیکھنے والے جب بیزار (بور) ہوتے ہیں تو عام طور پر گنگناتے ہیں یا اپنے آپ سے یا دوسروں سے باتیں کرنے لگتے ہیں۔ دوسرے لوگ آپ کے بارے میں شاید یہ سمجھیں کہ آپ ان کی بات پر توجہ نہیں دے رہے، لیکن آپ ان کی ہر بات سن بھی رہے ہوتے ہیں اور اسے سمجھتے بھی ہیں۔

صلاحیت کیسے بڑھائیں
نیچے دی گئی باتوں کے ذریعے آپ اپنی ’ سُن کر سیکھنے‘ کی صلاحیت میں اضافہ کرسکتے ہیں:
ایسی جگہ بیٹھیں جہاں آواز صاف سنائی دے۔
اپنی سماعت (کانوں کی سننے کی صلاحیت) کی جانچ کرتے رہیں اور جب ضرورت ہو تو کسی ماہر سے جانچ کرائیں۔
نئے الفاظ سیکھنے کے لیے فلش کارڈ استعمال کریں، ان پر لکھے لفظ بلند آواز سے پڑھیں اور دہرائیں۔
کہانیاں، اخبار، اسکول/کالج کا کام یا ہدایات بلند آواز سے پڑھیں۔
نئے الفاظ کے ہجّے ریکارڈ کرلیں اور پھر اس ریکارڈنگ کو سنیں۔
امتحان یا ٹیسٹ کے سوالات کو تھوڑی بلند آواز سے پڑھیں۔
نئے سبق، یا کسی بھی نئی عبارت کو بلند آواز سے پڑھیں۔
یاد رکھیں کہ اچھی طرح سیکھنے کے لیے ضروری ہے کہ آپ چیزوں کو صرف دیکھیں نہیں، بلکہ سُنیں بھی۔

دیکھ کر سیکھنے والے
اگر آپ دیکھ کر سیکھنے والے ہیں تو آپ پڑھ کر یا تصویریں دیکھ کر زیادہ اچھی طرحسیکھتے ہیں۔ آپ جو کچھ سیکھ رہے ہوتے ہیں اس کی تصویر آپ کے ذہن میں نقش ہوجاتی ہے اور آپ کے سیکھنے کا پہلا یا بنیادی طریقہ ’دیکھنا‘ اور ’سیکھنا‘ ہے۔
دیکھ کر سیکھنے والے عام طور پر صفائی پسند ہوتے ہیں۔ آپ چیزوں کو یاد رکھنے کے لیے آنکھیں بند کر کے ذہن میں ان کی تصویر بناتے ہیں۔ اگر آپ بیزار (بور) ہورہے ہوں تو خود کو کسی چیز کو دیکھنے میں مشغول کرلیتے ہیں۔ بولی گئی ہدایات سمجھنے میںآپ کو مشکل ہوسکتی ہے اور آوازیں آسانی سے آپ کی توجہ بھٹکا سکتی ہیں۔ رنگ اور تصویری کہانیاں آپ کو پسند آتی ہیں۔

صلاحیت کیسے بڑھائیں
اپنی ’دیکھ کر سیکھنے‘ کی صلاحیت بڑھانے کے لیے ان مشوروں پر عمل کریں:
کوشش کریں کہ کلاس میں سب سے آگے یا اگلی صفوں میں بیٹھیں۔
ہر سال اپنی آنکھوں کا معائنہ کرائیں۔
نئے الفاظ سیکھنے کے لیے فلش کارڈ استعمال کریں۔
ان چیزوں کو اپنے تخیل میں دیکھنے کی کوشش کریں، جن کی آواز سنائی دے (مثلاً بہتے پانی کی آواز) یا جن کے بارے میں آپ پڑھ رہے ہوں۔
سبق یا مضمون کے اہم الفاظ، خیال یا ہدایات کو لکھ لیں۔
کسی نئے تصور کو سمجھانے کے لیے اس کی تصویر یا خاکہ بنائیں اور پھر اس کی وضاحت کریں۔
چیزوں کو رنگوں کی علامت (کوڈ) دیں۔
سبق یاد کرتے وقت یا مطالعے کے دوران اپنی توجہ بھٹکنے نہ دیں۔
یاد رکھیں کہ اچھی طرح سیکھنے کے لیے ضروری ہے کہ آپ چیزوں کو دیکھیں، صرف سنیں نہیں۔

’چُھوکر‘ سیکھنے والے
اگر آپ ’چُھوکر سیکھنے والے‘ ہیں تو آپ چیزوں کو ان کے لَمس سے یا خود کام کر کے زیادہ بہتر سیکھتے ہیں۔ چیزوں اور اشیأکی جسمانی حرکت آپ کو یاد رہتی ہے اور آپ انہیں سمجھ لیتے ہیں۔ آپ اپنے ہاتھوں سے چیزوں کو چُھوکر، انہیں اٹھا کر، حرکت دے کر، بنا کر یا جو سیکھا ہے اس کا خاکہ یا تصویر بنا کر زیادہ بہتر طور پر سمجھتے ہیں۔ ایسے کاموں کو آپ آسانی سے اور جلد سیکھ لیتے ہیں جن میں کوئی سرگرمی شامل ہو۔ آپ کو جسمانی طور پر فعال اور سرگرم رہنے کی ضرورت پڑتی ہے۔ اس کے ساتھ آپ کو وقفے بھی چاہیے ہوتے ہیں۔ بولتے وقت آپ اپنے ہاتھوں اور ہاتھوں کے اشاروں سے کام لیتے ہیں اور دیر تک کسی جگہ بیٹھے رہنا (نچلا بیٹھنا) آپ کے لیے مشکل ہوتا ہے۔

’چُھوکر سیکھنے والے‘ چیزوں (مثلاً کھلونوں) کو کھول کر پرزے پرزے کردیتے ہیں اور پھر انہیں جوڑنے کی کوشش کرتے ہیں۔ جب آپ ’بیزار‘ (بور) ہوجاتے ہیں تو اِدھر اُدھر گھومنا شروع کردیتے ہیں۔ آپ میں مضبوط جسم کی خوبیاں ہوسکتی ہیں اور آپ کام کو مربوط طریقے سے کرسکتے ہیں۔ اپنے ہاتھ سے آپ جو کام کرتے ہیں وہ اچھی طرح یاد رہتا ہے لیکن سنی ہوئی باتوں (سبق/ہدایات) یا دیکھی ہوئی چیزوں (سبق کی عبارت/اشیأ) کو یاد رکھنے میں مشکل ہوتی ہے۔ آپ اکثر چھو کر اپنی بات دوسروں تک پہنچاتے ہیں اور دوسرے چُھوکر، مثلاً پشت پر تھپتھپا کر آپ کو شاباش دیں تو آپ کو زیادہ خوشی ہوتی ہے۔

صلاحیت کیسے بڑھائیں
ہاتھ سے کیے جانے والے کام کثرت سے کریں، مثلاً آرٹ پروجیکٹ، چلنے کی مشق یا کہانیوں کو ڈراما بنا کر پیش کرنا۔
پڑھتے یا مطالعہ کرتے وقت چہل قدمی کرنے، کرسی پر آگے پیچھے جھولنے، چیونگم چبانے میں کوئی ہرج نہیں ہے۔
خیالات اور تصورات کو واضح شکل دینے کے لیے فلش کارڈ اس طرح ترتیب دیں کہ تصویروں یا الفاظ سے آپ کی سوچ سامنے آجائے۔
الفاظ کے ہجے یاد کرنے کے لیے لفظ کے حروفوں پر انگلی پھیریں۔
پڑھتے یا سبق یاد کرتے یا مطالعے کے وقت تھوڑی تھوڑی دیر کے وقفے لیں۔ یہ وقفے لمبے نہیں ہونے چاہئیں۔
سیکھنے کے دوران پنسل سے میز بجانے، پاؤں ہلانے یا ہاتھ میں کوئی چیز گھمانے میں کوئی حرج نہیں ہے۔

سیکھے ہوئے سبق یا عبارت کو اچھی طرح یاد رکھنے کے لیے کمپیوٹر استعمال کریں(سبق، مضمون، عبارت کی اہم باتیں کمپیوٹر پر ٹائپ کریں)۔
یاد رکھیں کہ آپ صرف پڑھنے یا سننے کے مقابلے میں چیزوں اور کاموں کو خود کر کے زیادہ اچھی طرح سیکھتے ہیں۔ ہاتھ سے کیے جانے والے کام کثرت سے کریں، مثلاً آرٹ پروجیکٹ، چلنے کی مشق یا کہانیوں کو ڈراما بنا کر پیش کرنا۔

Post a Comment Blogger

 
Top