اُلوّ کے بارے عجیب و غریب توہمات
الّو بھی اﷲ کی بے شمار مخلوقات میں سے ایک مخلوق ہے جو اپنی وضع قطع ، اپنی سج دھج، اپنی دیومالائی مذہبی اہمیت کے ساتھ ساتھ اپنی نحوست کے لیے بہت ہی مشہور ہے۔ دنیا میں"الو" کی کل 205اقسام موجود ہیں لیکن ان کی پوری قوم کو دو خاص قبیلوں میں تقسیم کیا جاتاہے۔ ہمارے ہاں کسی شخص کو غلطی کرنے پر اسے ’الّو‘ کے لقب سے نواز دیا جاتا ہے۔حالانکہ مغرب میں الو کا مطلب ذہین کے طور پر لیا جاتا ہے جبکہ ہمارے ہاں اکثر بے وقوفیاں کرنے والے کو الو کہہ دیا جاتا ہے۔ آئیے آپ کو اس سے جُڑی کچھ توہمات کے بارے بتاتے ہیں۔

۔1 ہندو مذہب میں الّو کو ’لکشمی دیوی‘ کی سواری مانا جاتا ہے اور کہا جاتا ہے کہ وہ اُسی پر بیٹھ کر اپنے بھکتوں کے یہاں جاتی ہیں۔

۔2  ’برطانیہ‘ کے کچھ حصوں کے لوگ الّو کے بولنے یا اُس کے رونے کی آواز کومنحوس سمجھتے ہیں۔

۔3  جنوبی افریقہ میں الّو کی آواز کو موت کی علامت سمجھا جاتا ہے۔

۔4  کناڈا میں تین رات لگاتاراُلّو کے بولنے پر خاندان میں کسی کے موت یقینی سمجھی جاتی ہے۔

۔5  امریکہ کے جنوبی اور مغربی دونوں حصوں میں الّو کا دیکھا جانا منحوس سمجھا جاتا ہے۔

۔6 چین میں الّو دکھائی دینے پر پڑوسی کی موت کی علامت سمجھی جاتی ہے۔

۔7 ایران میں الّو کی اچھی آواز کو خوشی کی علامت مانتے ہیں، رونے جیسی آواز کو بُری علامت مانی جاتی ہے۔

۔8  ترکی میں بھی الّو کی آواز کو تو منحوس ہی سمجھا جاتا ہے لیکن سفید الّو کو سعد مانا جاتا ہے۔

۔9  ہندوستان میں گھروں پر الّو کا بیٹھ کر بولنا اچھا شُگُن نہیں مانا جاتا لیکن دیوالی میں گھروں میں خوشحالی لانے کے لیے جادو منتر کرنے، صحت یابی کے لیے الّوؤں کی بلی چڑھائی جاتی ہے۔ اخباروں میں اس طرح کی خبریں بھی پڑھنے میں آتی ہیں کہ گزشتہ دیوالی کے موقع پر ’’ایک الّو تیس لاکھ کا بکا‘‘۔عقل کے اندھوں سے کوئی کیا کہے کہ تم نے تیس لاکھ روپے غرباء پر خرچ کرتے تو وہ سال بھر تمہاری بھلائی کے لیے دعا کرتے اور ان کی دعا سے تمہارے دکھ درد دور ہوتے اور تم خود الّو بننے سے بچ جاتے۔

ہندوستان میں الو کے بارے کچھ یہ باتیں بھی مشہور ہیں کہ
۔1  اُلّو کی آنکھ کا کاجل بنا کر لگانے سے رات میں بھی دن کی طرح دکھائی دیتا ہے۔
۔ 2  الّو کے ناخُن بچے کے گلے میں باندھنے سے بچے کو نظر نہیں لگتی۔
۔ 3  الّو کے گوشت کو تعویذ میں بھر کر گلے میں باندھنے سے کسی طرح کا ڈر نہیں لگتا۔
 ۔4  الّو کی پوجا دیوالی میں کرنے سے لکشمی جی مہربان ہوتی ہیں بے حد دولت برستی ہے۔
۔5  الّو کے پر کو حساب کتاب کے ’کھاتے‘ میں رکھنے سے مال دولت میں برکت ہوتی ہے۔

۔ 10 الو سے جڑے اردو میں بہت سے محاورے بھی مشہور ہیں۔ جن کی وجہ سے بھی الو کو کچھ زیادہ ہی بدنام کردیا گیا ہے۔ جیسے
اپنا الّو سیدھا کرنا۔
الّو بنانا۔
الّو بننا۔
کاٹھ کا الّو۔
الّو کی ہوشیاری۔
الّو کا پٹھا۔
الّو کا ڈھکّن۔
کھاٹ پہ بیٹھا الّو۔
الّو کہیں کا۔
الّو کی طرح دیدے نچانا ۔ (حالانکہ الّو بیچارہ اپنی آنکھوں کو گھمانے میں معذور ہوتا ہے وہ صرف سامنے دیکھ سکتا ہے لیکن 270 ڈگری تک اپنی گردن گھما کر ایک ہی جگہ پر بیٹھ کر چاروں طرف دیکھ سکتا ہے) وغیرہ۔
معلوم نہیں ان محاوروں کو بنانے والے کون تھے یقینا ان کو الو کے بارے کچھ زیادہ معلومات نہیں ہوں گی۔ کیونکہ الو تو بیچارہ ایک سیدھا سادہ بے ضرر سا پرندہ ہے۔شائد اس کے عجیب الخلقت ہونے کی وجہ سے اس کے بارے عجیب و غریب توہمات مشہور ہوگئی ہوں گی۔
aristotle rhetoric,definition of ethos,enumerated data type,ethos definition,language definition,logos ethos pathos,ontology,ontology example,overwhelmingly large telescope,owl design,owl ontology,owl2,rdf,reference definition,rhetoric definition,same as,semantic web,types of owl,web languages,what is logos, fake owl for garden, fake owl to keep birds away, fake owl for sale, fake owl with rotating head, ullu ka patha song, ullu ka patha meaning in english, ullu ka patha in english, The Barn Owls of Pakistan, Big Vintage Owl Necklace

Post a Comment Blogger

 
Top