ذرا سوچئے کہ
اس بیچارے غریب رکشہ والے کی اپنی آمدنی کتنی ہو گی؟ کتنے پیسے یہ روز کماتا ہو گا؟ لیکن وہ مطمئن ہے اور اپنی 
اسی کمائی سے بیمار حضرات کو  بلامعاوضہ ہسپتال لے جانے کیلئے تیار ہے۔
اور ایک ہمارا اول درجہ کا طبقہ ہے جو کہ بڑی بڑی گاڑیوں کا مالک ہونے کے ساتھ ساتھ کافی مغرور بھی ہے۔  اپنے سے نچلوں 
کے ساتھ ہاتھ ملانے میں  اپنی توہین سمجھتا ہے۔ اور یہ طبقہ جب کسی حادثہ زدہ علاقہ سے گزرتا ہے تو ان کی  گاڑی کی 
سپیڈ اچھی خاصی ہو جاتی ہے تاکہ کسی مریض کو ہسپتال نہ لے جانے پڑ جائے۔
اللہ سب کو ہدایت دے۔ آمین 
khidmat e khalq in islam, khidmat e khalq poetry, khidmat e khalq essay in english, khidmat e khalq hadees, khidmat e khalq speech in urdu, khidmat e khalq mazmoon in urdu, Rafa e Aam Society,

Post a Comment Blogger

 
Top