چلو پھر لوٹ کے بچپن میں چلتے ہیں
کبھی میں چور بن جاؤں، سپاہی بن کے تم ڈھونڈو
کبھی پٹھو گرم توڑیں
اور ہنس کے بھا گ جائیں ہم
یا وہ ہی کھیل
جس میں آ نکھ بند کرکے، کوئی بیٹھے، چُھپیں باقی
بنو تم دادی اماں، اور بلاؤ ا پنے بچوں کو
کبھی لڈو کا لالچ دو
کبھی سونے کے نیکلس کا
خزانہ ڈھونڈنے کی چاہ میں، تم کو پکڑ لوں میں
مری آ نکھوں میں حیرت سے
بھری آنکھو ں سے یوں جھانکو
نہیں دیکھا کبھی پہلے
مجھے بھی یوں لگے جیسے، خزانہ پالیا میں نے!
چلو پھر لوٹ کے بچپن میں چلتے ہیں
بہت دن ہو گئے، بیکار کی دنیا میں اب رہتے
bachpan shayari punjabi, bachpan shayari facebook, bachpan shayari in urdu, bachpan shayari in hindi, mera bachpan shayari, shayari on bachpan ke din, shayari bachpan ki yaadein, bachpan shayri, bachpan poetry, best bachpan quotes, bachpan ke din poem

To:


Post a Comment Blogger

 
Top