woh paseenay mein sharabor taiz taiz qadmon se apni manzil ki janib rawan dawaan tha. dhoop ki shiddat is ki jald جھلسائے day rahi thi. nami ka yeh aalam tha ke is ke jootay taq tar ho chukay they. masjid kuch hi daur thi lekin yeh chand sa-aton ka faasla sadiiyon par muheet lag raha tha. woh chalta ja raha tha aur garmi ko bura bhala keh raha tha. is douran is ney be shumaar mugalzaat Sooraj ki shaan mein bkin. un sab iqdamaat ke bawajood halaat jon ke ton they. aasman par baadal ka aik tukda tha nah zameen par koi saaye ki panah. is ke zehan mein was wasay anay lagey ke jab woh masjid mein daakhil hoga to load shedding ki bana par bijli nahi hogi. garmi aur habs ka aalam mein molana sahib nah janey kitna lamba khutba den aur kitni taweel namaz prhhayin. woh guzashta kayi hafton se jummay ki namaz tark kar raha tha aur aaj himmat karkay ghar se nikla tha. achanak is ke dil mein khayaal aaya ke woh jummay ki namaz tark kardey aur masjid nah jaye. jab pehlay kuch nahi howa to ab bhi kuch nah hoga. bil akhir is ney wapsi ka iradah karliya aur ghar agaya. ghar poanch kar is khud ko aaraam da bistar par dala aur TV dekhnay mein masroof hogaya . aglay din jab so kar utha to daftar jana tha. garmi ki shiddat mein kal nisbat izafah ziyada tha. is ka daftar ghar se das kilometer daur tha aur yeh rasta usay bas mein tey karna tha. charonachar woh tayyar howa aur bas stop taq pouncha. wahan logon ka jim Ghafeer tha aur qareeb mein koi saya daar jagah nah thi. chunancha woh bhi aik konay mein khara hokar dhoop mein tapta raha. pandrah minute baad bas aayi jo musafiron se ldi hui thi. woh bhi aik paon phansa kar darwazay mein latak gaya. jab daftar aaya to is ke baazu shall ho chukay they aur پسینوں ke baais bura haal tha. yahan bhi is ney socha ke wapas ghar haulay lekin phir usay khayaal anay laga ke agar chhutti ki to boss ka gussa bardasht karna parre ga. is se qabal woh alalat ki bana par pehlay bhi chuttiyan krchka tha. mazeed رخصتوں se is ki nokari khatray mein par sakti thi. jab daftar mein daakhil howa to bijli gayab. mrta kya nah karta ki misdaaq is ney kursi sambhali aur kaam mein jat gaya . abhi woh kaam shuru hi kar raha tha ke achanak computer par aik e mil khil gayi jis mein yeh hadees likhi thi : " rasool Allah sale Allah aleh wasallam ney farmaya jo shakhs kahili وسستی ki binaa par mutawatar teen jummay ki namazain chhorey ga to Allah is ke dil par mohar laga day ga. " yeh parh kar khauf ke maaray is ke rongte kharray hogaye. usay yun mehsoos howa ke khuda ney usay apni bandagi se kharij kardiya ho. usay yun mehsoos howa ke koi is se mukhatib karkay keh raha hai ke tum ney boss ke khauf se to dhoop ki hiddat bardasht karli lekin khuda ka koi khayaal nah kya. woh boss to sirf chand tke deta aur kaam gadhon ki terhan laita hai is ka توخوف hai lekin woh khuda jis ney tumhe bachpan se jawani taq sirf diya hi hai aur kuch nahi liya is Rehman se koi sharam o haya nahi . is ki aankhon mein ansoo aagaye aur woh lunch karne ki bajaye utha aur samnay masjid mein namaz Zahar ada karne chal para. Sooraj ab bhi aag ugal raha tha aur garmi ki shiddat pehlay se ziyada thi. lekin ab is ney khuda ki ghulami ka قلادہ daal liya tha aur ghulamoo ka Shewa itaat hai shikayat nahi .
وہ پسینے میں شرابور تیز تیز قدموں سے اپنی منزل کی جانب رواں دواں تھا۔ دھوپ کی شدت اس کی جلد جھلسائے دے رہی تھی ۔ نمی کا یہ عالم تھا کہ اس کے جوتے تک تر ہوچکے تھے۔ مسجد کچھ ہی دور تھی لیکن یہ چند ساعتوں کا فاصلہ صدیوں پر محیط لگ رہا تھا۔ وہ چلتا جارہا تھا اور گرمی کو برا بھلا کہہ رہا تھا ۔اس دوران اس نے بے شمار مغلظات سورج کی شان میں بکیں۔ ان سب اقدامات کے باوجود حالات جوں کے توں تھے۔آسمان پر بادل کا ایک ٹکڑا تھا نہ زمین پر کوئی سائے کی پناہ۔
 اس کے ذہن میں وسوسے آنے لگے کہ جب وہ مسجد میں داخل ہوگا تو لوڈ شیڈنگ کی بنا پر بجلی نہیں ہوگی۔ گرمی اور حبس کا عالم میں مولانا صاحب نہ جانے کتنا لمبا خطبہ دیں اور کتنی طویل نماز پڑھائیں ۔ وہ گذشتہ کئی ہفتوں سے جمعہ کی نماز ترک کررہا تھا اور آج ہمت کرکے گھر سے نکلا تھا۔اچانک اس کے دل میں خیال آیا کہ وہ جمعہ کی نماز ترک کردے اور مسجد نہ جائے ۔ جب پہلے کچھ نہیں ہوا تو اب بھی کچھ نہ ہوگا۔ بالآخر اس نے واپسی کا ارادہ کرلیا اور گھر آگیا۔گھر پہنچ کر اس خود کو آرام دہ بستر پر ڈالا اور ٹی وی دیکھنے میں مصروف ہوگیا۔
اگلےدن جب سو کر اٹھا تو دفتر جانا تھا۔ گرمی کی شدت میں کل نسبت اضافہ زیادہ تھا ۔ اس کا دفتر گھر سے دس کلومیٹر دور تھا اور یہ راستہ اسے بس میں طے کرنا تھا۔ چاروناچار وہ تیار ہوا اور بس اسٹاپ تک پہنچا۔ وہاں لوگوں کا جم غفیر تھا اور قریب میں کوئی سایہ دار جگہ نہ تھی ۔ چنانچہ وہ بھی ایک کونے میں کھڑا ہوکر دھوپ میں تپتا رہا۔ پندرہ منٹ بعد بس آئی جو مسافروں سے لدی ہوئی تھی ۔ وہ بھی ایک پاؤں پھنسا کر دروازے میں لٹک گیا۔ جب دفتر آیا تو اس کے بازو شل ہوچکے تھے اور پسینوں کے باعث برا حال تھا۔ یہاں بھی اس نے سوچا کہ واپس گھر ہولے لیکن پھر اسے خیال آنے لگا کہ اگر چھٹی کی تو باس کا غصہ برداشت کرنا پڑے گا۔ اس سے قبل وہ علالت کی بنا پر پہلے بھی چھٹیاں کرچکا تھا ۔ مزید رخصتوں سے اس کی نوکری خطرے میں پڑ سکتی تھی۔جب دفتر میں داخل ہوا تو بجلی غائب۔مرتا کیا نہ کرتا کی مصداق اس نے کرسی سنبھالی اور کام میں جت گیا۔
ابھی وہ کام شروع ہی کررہا تھا کہ اچانک کمپیوٹر پر ایک ای میل کھل گئی جس میں یہ حدیث لکھی تھی
 رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جو شخص کاہلی وسستی کی بناء پر متواتر تین جمعہ کی نمازیں چھوڑے گا تو اللہ اس کے دل پر مہر لگا دے گا۔
یہ پڑھ کر خوف کے مارے اس کے رونگٹے کھڑےہوگئے۔ اسے یوں محسوس ہوا کہ خدا نے اسے اپنی بندگی سے خارج کردیا ہو۔ اسے یوں محسوس ہوا کہ کوئی اس سے مخاطب کرکےکہہ رہا ہے کہ تم نے باس کے خوف سے تو دھوپ کی حدت برداشت کرلی لیکن خدا کا کوئی خیال نہ کیا۔ وہ باس تو صرف چند ٹکے دیتا اور کام گدھوں کی طرح لیتا ہے اس کا توخوف ہے لیکن وہ خدا جس نے تمہیں بچپن سے جوانی تک صرف دیا ہی ہے اور کچھ نہیں لیا اس رحمان سے کوئی شرم و حیا نہیں۔
اس کی آنکھوں میں آنسو آگئے اور وہ لنچ کرنے کی بجائے اٹھا اور سامنے مسجد میں نماز ظہر ادا کرنے چل پڑا ۔ سورج اب بھی آگ اگل رہا تھا اور گرمی کی شدت پہلے سے زیادہ تھی۔ لیکن اب اس نے خدا کی غلامی کا قلادہ ڈال لیا تھا اور غلاموں کا شیوہ اطاعت ہے شکایت نہیں۔

Post a Comment Blogger

 
Top