پھر کبھی لوٹ کر نہ آئیں گے
ہم ترا شہر چھوڑ جائیں گے
دور افتادہ بستیوں میں کہیں
تیری یادوں سے لو لگائیں گے
شمعِ ماہ و نجوم گل کر کے
آنسوؤں کے دیئے جلائیں گے
آخری بار اک غزل سن لو
آخری بار ہم سنائیں گےصورتِ موجِ ہوا جالب
ساری دنیا کی خاک اڑائیں گے
Phir kabhi Lout Kar Na Ayen Ge Hum Tera Shehar Chore Jayen Ge

Post a Comment Blogger

 
Top