ansaa noon ko bemari ka la-haq ho na mann janib Allah hai avrallh taala ne har bemari ka ilaaj bhi nazil farmaya hai jaisay ke irshad نبویﷺ hai' ' Allah taala ne har bemari ki دواء nazil ki hai yeh allag baat hai ke kisi ne maloom kar li aur kisi ne nah ki' ' bimarion ke ilaaj ke liye Maroof tareeqon ( Rohani ilaaj, دواء aur ghiza ke sath ilaaj, حجامہ se ilaaj ) se ilaaj karna sunnat se saabit hai. Rohani aur jismani bimarion se nijaat ke liye imaan o ray ilaaj ke darmiyan aik mazboot talluq hai agar imaan ki kefiyat mein pukhtagi ho gi to bemari se Shifa bhi isi qader taizi se hogi. aymh محدثین ne kutub ahadees mein kitaab الطب ke naam se abwab bhi qaim kiye aur baaz aymh ne tib par mustaqil kutub bhi تصنف ki hain imam Ibn Qaim ki الطب النبوی qabil zikar hai. aur isi terhan baaz mahireen tib ne tib nabwi, jadeed science aur asar y tehqiqaat ko samnay rakhtay

انسا ن کو بیماری کا لاحق ہو نا من جانب اللہ ہے اوراللہ تعالی نے ہر بیماری کا علاج بھی نازل فرمایا ہے جیسے کہ ارشاد نبوی ہے ’’ اللہ تعالی نے ہر بیماری کی دواء نازل کی ہے یہ الگ بات ہے کہ کسی نےمعلوم کر لی اور کسی نے نہ کی ‘‘بیماریوں کے علاج کے لیے معروف طریقوں(روحانی علاج،دواء اور غذا کے ساتھ علاج،حجامہ سے علاج) سے علاج کرنا سنت سے ثابت ہے ۔ روحانی اور جسمانی بیماریوں سےنجات کے لیے ایمان او ر علاج کے درمیان ایک مضبوط تعلق ہے اگر ایمان کی کیفیت میں پختگی ہو گی تو بیماری سے شفاء بھی اسی قدر تیزی سے ہوگی ۔ اس کتابچہ میں واضح کیا گیا ہے کہ کس طرح رسول اللہ ﷺ کی چودہ سو سال پہلے کہی گئی باتیں سچ ثابت ہوئی اور اس لئے آج سائنس ماننے پر مجبور ہے کہ اسلام واقعی سچا دین ہے۔

Post a Comment Blogger

 
Top