mukhtalif ahadees rasool اللہﷺ mein Dajjal aur alamaat qayamat ka tazkara aaya hai. har daur ke ulama ny un ki Tafheem , tashreeh aur تطبیق ka apna apna tareeqa apna ya hai. isi terhan mojooda daur mein bhi dar haqeeqat bohat ziyada ftne runuma ho rahay hain. un ftnon ny aik lehaaz se poori insaaniyat ko apni lapait mein le liya hai. doosri taraf نصوص Shariat bhi mukhtalif terhan ke ftnon ki taraf nishandahi karti hain. har daur mein yeh aik naazuk masla raha hai ke نصوص Shariat ka halaat par انطباق kaisay kiya jaye. علمانے apne farz mansabi se ohda bar-aan hotay hue is naazuk mauzo par apni apni aara ka izhaar kya hai. har aik ki mukhtalif raye bhi ho sakti hai. rasool اللہﷺ ki taraf se alamaat qayamat ke hawalay se di gayi pishin goyyon ka انطباق intahi khatan aur hassas masla hai. chunancha mojooda daur mein is tanazur mein kayi aik fikri rujhanaat samnay aeye hain. un mein se kuch intahaa pasandana bhi hain. jabkay zair nazar kutta bay mein musannif Mosoof ny isi ahthyat ko samnay rakhtay hue تطبیق ki koshish to ki hai lekin apni kisi bhi raye ko hatmi nahi kaha. Albata jin waqeat ki taraf ulmaye ummat nishandahi kar chuke they un ki yaqeen ke sath tashreeh ki hai .مختلف احادیث رسول اللہﷺ میں دجال اور علامات قیامت کا تذکرہ آیا ہے۔ہر دور کے علماء نے ان کی تفہیم ، تشریح اور تطبیق کا اپنا اپنا طریقہ اپنا یا ہے۔اسی طرح موجودہ دور میں بھی درحقیقت بہت زیادہ فتنے رونما ہورہے ہیں۔ان فتنوں نے ایک لحاظ سے پوری انسانیت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔دوسری طرف نصوص شریعت بھی مختلف طرح کے فتنوں کی طرف نشاندہی کرتی ہیں۔ ہر دور میں یہ ایک نازک مسلہ رہا ہے کہ نصوص شریعت کا حالات پر انطباق کیسے کیاجائے۔علمانے اپنے فرض منصبی سے عہدہ برآں ہوتے ہوئے اس نازک موضوع پر اپنی اپنی آرا کا اظہار کیا ہے۔ ہر ایک کی مختلف رائے بھی ہو سکتی ہے۔رسول اللہﷺ کی طرف سے علامات قیامت کے حوالے سے دی گئی پیشین گوئیوں کا انطباق انتہائی کھٹن اور حساس مسلہ ہے۔ چنانچہ موجودہ دور میں اس تناظر میں کئی ایک فکری رجحانات سامنے آئے ہیں۔ ان میں سے کچھ انتہا پسندانہ بھی ہیں۔جبکہ زیر نظر کتا ب میں مصنف موصوف نے اسی احتیاط کو سامنے رکھتے ہوئے تطبیق کی کوشش تو کی ہے لیکن اپنی کسی بھی رائے کو حتمی نہیں کہا۔ البتہ جن واقعات کی طرف علمائے امت نشاندہی کر چکے تھے ان کی یقین کے ساتھ تشریح کی ہے۔

Post a Comment Blogger

 
Top